Lyrics – Ye Maa Kahan Na Thee – Nadeem Sarwar 2008

صحفہ اول / اردو نوحے / سید ندیم رضا سرور / یہ ماں کہاں نہ تھی

نو�ہ خواں سید ندیم رضا سرور
نوحہ خواں سید ندیم رضا سرور


شاعر : ریحان اعظمی
نوحہ خواں : ندیم رضا سرور
سال : 2008
کمپوزر : زین عباس
اس نوحے کے تحریر کرنے میں اگر کوئی غلطی سرزد ہوگئی ہوں تو اس کے لیے میں معذرت خواہ ہوں

یہ نوحہ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے نیچے دئیے گئے لنک پر کلک کریں
یہ ماں کہاں نہ تھی.MP3
(Right Click / Save Target as or copy paste the link into new browser)


یثرب میں آئيں خواب میں زینب کے یوں بتول
ماتھا بھرا تھا خون میں سر پر ردا نہ تھی
زینب نے پوچھا کس کے لہو سے جبیں ہے لال
اماں تم پر تو آفت سفر کربلا نہ تھی
رو کر کہا بتول نے تم یاد تو کرو
تم اپنی یاد کو ذرا آباد تو کرو
کس وقت کس جگہ میں شریک عزا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

روئی تمہارے ساتھ بہتر کی لاش پر
اکبر کی لاش پر علی اصغر کی لاش پر
زینب میں کس شہید کی صاحب عزا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

جھاڑا تھا کس نے بالوں سے صحرائے کربلا
کس نے بچھایا خاک مصلائے کربلا
ہائے ہائے میں کربلا میں شب قتل کیا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

رخت کوہن حسین نے مانگا تھا جس گھڑی
خیمے میں بی بی تم کو غش آيا تھا جس گھڑی
خیمے کے پیچھے رونے کی میری صدا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

رخصت کو آیا خیمے میں جب ابن بوتراب
تھامی تھی تم نے جس گھڑی مظلوم کی رکاب
کیا ساتھ ساتھ گھوڑے کے میں ننگ پا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

جب تم گری تھیں بھائی کے لاشے پہ اونٹ سے
ناقے پہ تم سوار تھی بازو رسن میں تھے
کیا بال کھولے لاش پہ خیرالنساء نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

یثرب سے تابہ ماریہ اور واں سے تابہ شام
ہمراں ہاں تھی قدم بہ قدم ساتھ گامزاں
زینب کہیں حسین سے زہرا جدا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

زینب نے عرض کی کہ بجا کہتی ہیں جناب
میں سن رہی ہوں جو بخدا کہتی ہیں جناب
اے والدہ مجھے خبر دست و پا نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

امسال بھی نجف کا ارادہ تھا اے دبیر
اور کربلا بھی جاؤں یہ سوچا تھا اے دبیر
پر رہ گئے تڑپ کے کہ قسمت رساں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی
زینب سفر میں ساتھ تیرے ماں کہاں نہ تھی
یہ ماں کہاں نہ تھی

شائع کردہ

اپنی راۓ دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s