Lyrics – Atthara Baras K Ali Akbar Ka Janaza – Ali Zia Rizvi

صحفہ اول / اردو نوحے / علی ضیاء رضوی / اٹھارہ برس کے علی اکبر

نوحے خواں علی رضوی
علی ضیاء رضوی

نوحہ خواں : علی ضیاء رضوی
کمپوزر : زین عباس
اس نوحے کے تحریر کرنے میں اگر کوئی غلطی سرزد ہوگئی ہوں تو اس کے لیے میں معذرت خواہ ہوں


اٹھارہ برس کے علی اکبر کا جنازہ
اٹھارہ برس کے علی اکبر کا جنازہ

شہہ لاتے ہیں ہم شکل پیعمبر کا جنازہ
اٹھارہ برس کے علی اکبر کا جنازہ

اے کل کے مددگار مدد کرنے کو آؤ
شبیر سے اٹھتا نہیں اکبر کا جنازہ

خیمے میں علم آیا ہے کہرام ہے برپا
دریا پہ ہے عباس دلاور کا جنازہ

کس درجہ سکینہ سے تھا شرمندہ علمدار
شہہ لا نہ سکے اپنے برادر کا جنازہ

پڑ جائے نہ یارب کہیں زینب کی نگاہیں
تیروں پہ ہے رکھا ہوا سرور کا جنازہ

کیا ظلم ہے تپتی ہوئ ریتی پہ پڑا ہے
بے گور و کفن سبط پیعمبر کا جنازہ

بانو نے کہا تیر ہیں پیوست بدن میں
دھیرے سے اٹھانا میرے شوہر کا جنازہ

اٹھارہ برس کے علی اکبر کا جنازہ
اٹھارہ برس کے علی اکبر کا جنازہ

Advertisements

شائع کردہ منجانب

اپنی راۓ دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s