Wording – Mein Zulfiqar Hoon – Nayab Hallouri

صحفہ اول / اردو نوحے / نایاب ہلّوری / میں ذوالفقار ہوں

نایاب ہلوری
نایاب ہلوری

شاعر : نایاب ہلّوری
منقبت خواں : نایاب ہلّوری
کمپوزر : زین عباس
اس منقبت کے تحریر کرنے میں اگر کوئی غلطی سرزد ہوگئی ہوں تو اس کے لیے میں معذرت خواہ ہوں۔


میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

آدم کے ہاتھ سے مجھے صیقل کیا گیا
یوسف کے حسن سے میرا چہرہ لیا گیا
موسی کی ہیبتوں کا علاقہ دیا گیا
آیا قریب جو بھی میرے وہ چلا گیا
قرآں کی طرح عرش سے نازل ہوئ ہوں میں
تب مرتضی کے ہاتھوں کے قابل ہوئ ہوں میں

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

ساۓ کی طرح رہتی ہوں ہمراہ بوتراب
ہے کس میں دم جو لاۓ میرے وار کا جواب
تیزی پہ میرے صدقے ہیں سو جان سے عقاب
کہتے ہیں لوگ مجھ کو ہواؤں کا ہمرکاب
مت سمجھو مجھ کو نغمہ بے صوت کی طرح
چلتی ہوں رن میں میں ملک الموت کی طرح

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

محور سے اپنے ہو نہیں سکتی ادھر ادھر
رہتی ہے مجھ پہ حیدر کرّار کی نظر
میدان میں ہمیشہ میں رہتی ہوں باخبر
آقا کی بارگاہ سے پایا یہ ہنر
رکھتی ہوں میں بھی اپنے قدم دیکھ بھال کے
دشمن پر وار کرتی ہوں شجرہ کھنگال کے

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

غیض و غضب میں نظریں اٹھاتی ہوں جس طرف
بے سر دکھائ دیتی ہے اہل ستم کی صف
فضل خدا سے یہ بھی ملا ہے مجھے شرف
محرم مجھے سمجھتے رہے ہیں شہہ نجف
آتی ہوں جب بھی دین کے دشمن کو مار کے
رکھتی ہیں فاطمہ میرا صدقہ اتار کے

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

قدرت کے کارخانے میں ڈھالی گئ ہوں میں
برسوں قضا کی گود میں پالی گئ ہوں میں
دست خدا کے ہاتھوں سنبھالی گئ ہوں میں
اب بہر انتقام چھپا لی گئ ہوں میں
آؤ گی جب بھی غیب کی زنجیر توڑ کے
دشمن علی کے بھاگے گے قبروں کو چھوڑ کے

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

وارث ہے میرا وارث مولاۓ کائنات
اللہ کے کرم سے ابھی تک ہے باحیات
سن لیں یہ کان کھول کے بے دین میری بات
میرے قدم سے پا نہیں سکتا کوئ نجات
میں آؤں گی تو اٹھے گا ایک شور المّاں
جبر‏ئیل پر بچھائيں گے آخر کہاں کہاں

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

محبوب کردگار کا پیارا ہے غیب میں
مولا علی کی آنکھوں کا تارا ہے غیب میں
زہرا کی حسرتوں کا منارہ ہے غیب میں
اب بھی حسینیت کا سہارا ہے غیب میں
وہ آۓ گا تو فرش مسّرت بچھاؤں گی
دشمن عزا کے روئيں گے میں مسکراؤں گی

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

محراب میں بھی رکھتے تھے مجھ کو شہہ حجاز
سمجھے کا مجھ کو کیسے کوئ منکر نماز
کل بھی تھی آج بھی ہوں زمانے میں سرفراز
عمر دراز کا میری نایاب ہے یہ راز
صحت ملی ہے کفر کے سر کاٹ کاٹ کے
زندہ ہوں دشمنوں کا لہو چاٹ چاٹ کے

میں ذوالفقار ہوں ‘ میں ذوالفقار ہوں

آن لائــن فـــرش عـــزا
http://www.xainabbas.wordpress.com

شائع کردہ

2 خیالات “Wording – Mein Zulfiqar Hoon – Nayab Hallouri” پہ

اپنی راۓ دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s