Wording – Haye Sakina Haye Piyas – Mahum, Saania & Adeeya Hashim (Ghamkhuran-e-Sakina) UK – 2010

صحفہ اول / اردو نوحے / ماہم، ثانیہ، ادعیہ ہاشم (غمخواران سکینہ)۔ / ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس

Mahum Saania & Adeeya Hashim (Ghamkhuran-e-Sakina) UK
Mahum Saania & Adeeya Hashim (Ghamkhuran-e-Sakina) UK


شاعر : ماجد

نوحہ خواں :
Mahum, Saania & Adeeya Hashim (Ghamkhuran-e-Sakina) UK
سال : 2010
کمپوزر : زین عباس
اس نوحے کے تحریر کرنے میں اگر کوئی غلطی سرزد ہوگئی ہوں تو اس کے لیے میں معذرت خواہ ہوں


اہل حرم کا یہ نوحہ تھا
ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس
خود یہ علم بھی کہتا تھا
ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس

ڈوبا لہو میں نہر سے جانے لگا علم
بچوں کو دور سے نظر آنے لگا علم
پانی کی آس دل میں بڑھانے لگا علم
سرور کے دل میں حشر اٹھانے لگا علم
مرگ جری سے درد کا عکاس بن گیا
خیموں میں آکے پیکر عباس بن گیا
لیکن علم حسین کے ہاتھوں میں دیکھ کر
روکر پکاری بالی سکینہ کہ اے پدر
جلدی بتائیے چچا عباس ہیں کدھر
اک مشک آب بھرنے گۓ تھے وہ نہر پر
بابا یہ کہہ دو جا کہ میرے عمّو جان سے
پانی کا شکوہ اب نہ کروں گی زبان سے

ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس
ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس

رو کہ دیتی تھی سکینہ یہ صدا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

پیاسے بچوں کے لبوں پر ہے بکاہ
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

ہاۓ وہ پیاسے بچے
اشک برسانے لگے
ننھے ہاتھوں میں جو تھے
کوزے سب توڑ دئیے
اور پرچم سے لپٹ کر یہ کہ
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

کبھی سر کو پیٹا
کبھی سینہ پیٹا
ہے لبوں پر یہ صدا
جلد آجاؤ چچا
اب نہ پانی کا کریں گے شکوہ
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

اے میرے اچھے چچا
اے میرے پیارے چچا
اے میرے پیاسے چچا
میرے دکھ پاۓ چچا
اب کوئ لطف نہ جینے میں رہا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

آپ کے بعد چچا
ظلم ہم پر یہ ہوا
کسی کا ہاتھ بندھا
کسی کا ننھا گلا
اب تو بےمشک ہی آجاؤ چچا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

غم زدہ وہ بچے
جس گھڑی قید ہوۓ
سبلیاں کھاتے ہوۓ
بس یہی کہتے تھے
پانی مت لاؤ تم آجاؤ چچا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

آکے تم دیکھو ذرا
ہم پہ جو ظلم ہوا
پانی جب بھی مانگا
ظالموں نے مارا
تم بتاؤ یہ لعینوں کو ذرا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

اب تو سوۓ دریا
جارہے ہیں بابا
کیسے روکوں میں بھلا
کوئ بتلاؤ ذرا
آکے تم بابا سے کہہ دو اتنا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

ہے یہی غم منعم
غم ہے ماجد دائم
دختران ہاشم
یہ صدا ہے قائم
آتی ہے قبر سکینہ سے صدا
اب ہمیں پیاس نہیں ہے عمّو

جب بھی ماتم کہیں ہوتا ہے بپا
یہی ہر سمت سے اٹھتی ہے صدا
جوش کچھ اور بھی بڑھتا دیکھا
ماتمی پڑھتا ہے جب یہ جملہ

ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس
ہاۓ سکینہ ہاۓ پیاس

آن لائــن فـــرش عـــزا
http://www.xainabbas.wordpress.com

شائع کردہ

اپنی راۓ دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s