دریا بہتا رہا، ندیم سرور، 2012/13

صحفہ اول / اردو نوحے / سید ندیم رضا سرور / دریا بہتا رہا

سید ندیم رضا سرور

شاعر : ریحان اعظمی
نوحہ خواں : سید ندیم رضا سرور
سال : 2012-2013
کمپوزر : زین عباس
اس نوحے کے تحریر کرنے میں اگر کوئی غلطی سرزد ہوگئی ہوں تو اس کے لیے میں معذرت خواہ ہوں۔

آڈیو
یہ نوحہ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے نیچے دئیے گئے لنک پر کلک کریں
دریا بہتا رہا.MP3
(Right Click / Save Target as or copy paste the link into new browser)

ویڈیو

اے واۓ نہر علقمہ
دریا بہتا رہا – سامنے اسی دریا کے پیاسے تڑپتے ہیں
دریا بہتا رہا

بنا جن کی خاطر پانی انہی کو ملا نہ
انہی سے تو سیکھا اس نے زمیں پر برسنا
ستم ہے دکھا کر ان کو ہے پانی بہانا ہاۓ
دریا بہتا رہا – سامنے اسی دریا کے پیاسے تڑپتے ہیں
دریا بہتا رہا

سویرے اسی دریا پہ علم والا آيا
کسی تشنہ لب بچی کا وہ مشکیزہ لایا
چھدی مشک اس پیاسے کی وہ واپس گیا نہ ہاۓ
دریا بہتا رہا – سامنے اسی دریا کے پیاسے تڑپتے ہیں
دریا بہتا رہا

وہ جس کی اذاں گونجی تھی سویرے سویرے
چڑھا دن تو بابا اس کا اسی کو سنبھالے
پکارا ہے خاک اب دنیا تیرے بعد بیٹا ہاۓ
دریا بہتا رہا – سامنے اسی دریا کے پیاسے تڑپتے ہیں
دریا بہتا رہا

ادھر بےکفن تھا بھائی بہن بے ردا تھی
جلاتی ہوئی خیموں کو عجب شان آئی
کوئی ماں پکاری بابا لٹا میرا کنبہ ہاۓ
دریا بہتا رہا – سامنے اسی دریا کے پیاسے تڑپتے ہیں
دریا بہتا رہا

امیر عرب کا بیٹا، لباس غریبی
ریحان اور سرور ہم نہ یہ بھولے کبھی بھی
وہ دریا کا بہتا پانی وہ پیاسے کا سجدہ ہاۓ
دریا بہتا رہا – سامنے اسی دریا کے پیاسے تڑپتے ہیں
دریا بہتا رہا
اے واۓ نہر علقمہ

آن لائن فرش عزا
http://www.xainabbas.wordpress.com

شائع کردہ

2 خیالات “دریا بہتا رہا، ندیم سرور، 2012/13” پہ

اپنی راۓ دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s